TwelverShia.net Forum

Ardor of salaf against blashphamours of sahaba.

0 Members and 1 Guest are viewing this topic.

TAHIR

Ardor of salaf against blashphamours of sahaba.
« on: September 06, 2020, 04:00:26 PM »
Urdu article:
I will be posting an urdu  article by hafidh Muhamad tahir (and that isn't me ) , Inshallah i will be translating it upto a small length for now. Please translate from the remaining article , till we have the full article translated.

Urdu article :

"گستاخِ صحابہ اور غیرتِ سلف رحمہم اللہ"

✍ حافظ محمد طاھر

1. امام عاصم الأحول رحمہ اللہ (المتوفی : ١٤٢ھ) جو مدائن شہر کے قاضی بھی رہے ہیں وہ فرماتے ہیں :

 أتيت بِرَجُل قد سبّ عُثْمَان فضربته عشرَة أسواط قَالَ ثمَّ عَاد لما ضَربته فضربته عشرَة أُخْرَى فَلم يزل يسبه حَتَّى ضَربته سبعين سَوْطًا.

"میرے پاس ایک شخص لایا گیا جس نے سیدنا عثمان رضی اللہ عنہ کو گالی دی تھی، میں نے اسے دس کوڑے لگائے، اس نے دوبارہ گالی دی میں نے دس کوڑے مزید لگائے، پھر وہ دوبارہ ایسا کرتا رہا حتی کہ میں نے اسے ستر کوڑے مارے."

📚(العلل و معرفة الرجال لأحمد : ٤٢٨/١ ح : ٩٤٨ وسندہ صحيح)

2. إبراهيم بن میسرہ بیان کرتے ہیں :

مَا رَأَيْتُ عُمَرَ بْنَ عَبْدِ الْعَزِيزِ ضَرَبَ إِنْسَانًا قَطُّ، إِلَّا إِنْسَانًا شَتَمَ مُعَاوِيَةَ، فَضَرَبَهُ أَسْوَاطًا.

"میں نے کبھی نہیں دیکھا کہ سیدنا عمر بن عبدالعزیز رحمہ اللہ نے کسی انسان کو مارا ہو سوائے ایک شخص کے جس نے سیدنا معاویہ رضی اللہ عنہ کو گالی دی تو انہوں نے اسے کوڑے لگائے."

📚( شرح إعتقاد أهل السنة للالكائي : 2385 وسنده حسن)

3. ابو الفتوح عز الدين ابن ابی طالب (المتوفی : ٦٥٣ھ) جو کہ سیدنا حسن بن علی رضی اللہ عنہما کی اولاد میں سے تھے انہوں نے ایک رافضی النّجيب يَحْيَى بْن أحمد الحلي ابن العُود کو صحابہ کرام رضی اللہ عنہم کو گالیاں دینے کی وجہ سے گدھے پر بٹھا کر حلب شہر کا چکر لگوایا تھا."

📚(تاریخ الإسلام للذهبي : ٧٤٩/١٤)

4. سیدنا عبد اللہ بن الحسن بن الحسن بن علی بن ابی طالب رضی اللہ عنہم اجمعین نے ایک (گستاخ صحابہ) رافضی سے کہا :
وَالله ان قَتلك لقرابة.

" اللہ قسم تمہارا قتل قربت الہی کا ذریعہ ہے. "

📚( تاریخ ابن معين رواية الدوري : ٢٤٨/٣ ح : ١١٦٢ وسنده صحیح ،تاریخ دمشق لابن عساكر : ٣٧٧/٢٧ وسنده بعضهم الي الحسن بن الحسن بن علي رضي الله عنه)

5. سیدنا حسن رضی اللہ عنہ کے پوتے سیدنا ابراہیم بن الحسن بن الحسن بن علی بن ابی طالب رحمہم اللہ جمیعا فرماتے ہیں :

دخل علي المغيرة بن سعيد وأنا شاب، وكنت وأنا شاب، أشبه برسول الله صلى الله عليه وسلم , فذكر من قرابتي وشبهي وأمله في , قال: ثم ذكر أبا بكر وعمر , فلعنهما وبرئ منهما , قال: قلت: يا عدو الله , أعندي؟ قال: فخنقته خنقا , قال: فقلت له: أرأيت قولك للمغيرة , فخنقته خنقا , أخنقته بالكلام أم بغيره , قال: بل خنقته حتى أدلع لسانه.
 
"میرے ایامِ شباب میں میرے پاس مغیرہ بن سعید آیا، میں چونکہ جوانی میں شکل و صورت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم سے بہت مشابہت رکھتا تھا، تو اس نے میری رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم سے رشتہ داری، آپ سے مشابہت اور میرے متعلق اپنی خواہشات کا اظہار کیا، پھر اس نے سیدنا ابو بکر و عمر رضی اللہ عنہما کا تذکرہ کیا تو ان پر لعنت کی اور اعلان براءت کیا، میں نے کہا : اے اللہ کے دشمن! میرے سامنے تو ایسا کرتا ہے!؟؟؟ فرماتے ہیں : میں نے بڑی مضبوطی سے اس کا گلہ دبا دیا . (راوی کہتے ہیں) میں نے پوچھا : گلہ دبانے کا مطلب کہ آپ نے اسے باتوں سے چپ کرا دیا؟؟؟ فرمایا : نہیں بلکہ میں نے اس کا گلہ اتنی مضبوطی سے دبایا کہ اس کی زبان باہر نکل آئی تھی."

📚(كتاب الضعفاء للعقیلی : ١٧٩/٤ وسندہ صحیح ، ميزان الاعتدال للذهبي. و نسبه البعض الي الحسن بن الحسن بن علي رحمه الله انظر تاريخ الإسلام و سير أعلام النبلاء للذهبي)

یاد رہے کہ یہ وہی مغیرہ بن سعید جو نہایت برے عقائد و نظریات کا مالک تھا، حافظ ذہبی رحمہ اللہ اس کا نام ذکر کرنے کے بعد فرماتے ہیں : لعنہ اللہ. (تاریخ الإسلام للذهبي : ٣١٧/٣)

امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
المغيرة بْن سَعِيد هذا لم يكن بالكوفة ألعن منه.
"اس مغیرہ بن سعید سے بڑا لعنتی پورے کوفے میں نہیں تھا."
(الكامل في ضعفاء الرجال : ٧٣/٨)

حافظ ابن حزم رحمہ اللہ نے بھی اس کے متعلق کہا :
"لَعنه الله. "
(الفصل فی الملل والأهواء و النحل : ١٤١/٤)

امام اعمش رحمہ اللہ بیان فرماتے ہیں قُلْتُ لِلْمُغِيرَةِ بْنِ سَعِيدٍ: أَتُحْيِي الْمَوْتَى؟ قَالَ: لَا. فَقُلْتُ: فَعَلِيٌّ؟ قَالَ: وَالَّذِي أَحْلِفُ بِهِ لَوْ شَاءَ أَحْيَى عَادًا وَثَمُودًا وَقُرُونًا بَيْنَ ذلك كثيرا.

"میں نے مغیرہ بن سعید سے پوچھا : کیا تو مردے زندہ کر سکتا ہے، بولا : نہیں. میں نے کہا : سیدنا علی رضی اللہ عنہ کر سکتے ہیں!؟؟؟ کہنے لگا : اللہ کی قسم! اگر وہ چاہیں تو قوم عاد و ثمود اور ان کے مابین ہلاک ہونے والی ساری بستیاں زندہ کر دیں."

 📚 (المعرفة والتاريخ للفسوي : ٥٠/٣  وسندہ صحیح، و المتفق و المفترق للخطیب : ١٩٣٨/٣  ت : ١٣٦٢، كتاب الضعفاء للعقیلی : ١٧٩/٤ )

ایک دوسری روایت میں ہے امام اعمش فرماتے ہیں میں نے اس سے کہا :

 ومن أين علمت ذاك قَالَ لأني أتيت رجلا من أهل البيت فتفل فِي فيِّ فما بقي شيء إلاَّ وأنا أعلمه.

"تجھے یہ کیسے پتا چلا؟؟ تو کہنے لگا : میں اہل بیت کے ایک شخص کے پا

س گیا اس نے میرے منہ میں تفل کیا (پھونک ماری) جس کی بدولت میں ہر ہر چیز کو جان گیا."

📚 (الكامل في ضعفاء الرجال : 8/73 وسنده صحیح)

اسی طرح امام اعمش رحمہ اللہ ہی بیان فرماتے ہیں :
 
 أتاني المغيرة بْن سَعِيد فجلس بين يدي فذكر عليا وذكر الأنبياء ففضله عليهم ثُمّ، قَال: كَانَ علي بالبصرة فأتاه أعمى فمسح يده على عينيه فأبصر ثُمَّ قَالَ لَهُ تحب أن ترى الكوفة فَقَالَ نعم فأمر بالكوفة فحملت إليه حَتَّى نظر إليها ثُمّ قَالَ لَهَا ارجعي فرجعت فقلت سبحان اللَّه العظيم سبحان اللَّه العظيم فلما رأى إنكاري عليه تركني وقام.

"مغیرہ بن سعید میرے پاس آ کر بیٹھ گیا پھر انبیاء کرام علیہم السلام اور سیدنا علی رضی اللہ عنہ کا ذکر کیا اور سیدنا علی رضی اللہ عنہ کو ان سے افضل قرار دیا. پھر کہنے لگا : جب سیدنا علی کوفہ میں تھے تو ان کے پاس ایک اندھا آیا، انہوں نے اسکی آنکھوں پر ہاتھ پھیرا وہ دیکھنے لگا پھر سیدنا علی رضی اللہ عنہ نے اس سے پوچھا : کوفہ شہر دیکھنا چاہتے ہو!؟؟؟ اس نے کہا : جی بالکل. آپ رضی اللہ عنہ نے کوفہ کو حکم دیا وہ ان کے پاس آگیا حتی کہ اس شخص نے دیکھ لیا پھر آپ نے کوفہ کو حکم دیا کہ واپس لوٹ جاؤ تو وہ واپس چلا گیا. (امام اعمش) فرماتے ہیں میں نے کہا : سبحان اللہ العظيم سبحان اللہ العظيم.
جب اس نے میرا انکار دیکھا تو مجھے چھوڑ کر اٹھ کھڑا ہوا."

📚 ( الكامل في ضعفاء الرجال : ٧٣/٨ وسنده صحیح)

بعض روایات کے مطابق گورنرِ واسط خالد بن عبد اللہ القسری نے اسے اور اس کے ساتھیوں کو انہیں باطل عقائد کی وجہ سے بطورِ عبرت لوگوں کے سامنے زندہ جلا دیا تھا.
(تهذيب الكمال للمزي : ١١٢/٨،تاريخ الإسلام للذهبي : ٣١٨/٣)

یہ خالد بن عبدالله القسري وہی گورنر ہیں جن کے بارے معروف ہے کہ انہوں نے واسط میں عیدالاضحی کے دن ایک گمراہ شخص جعد بن درہم کو ذبح کیا تھا.
(التاریخ الکبیر للبخاری : ٦٣/١ ، تاریخ بغداد للخطيب : ٤٢١/١٢)

نشر مکرر.

TAHIR

Re: Ardor of salaf against blashphamours of sahaba.
« Reply #1 on: September 06, 2020, 04:22:13 PM »
 
Quote
%u0639%u0627%u0635%u0645 %u0627%u0644%u0623%u062D%u0648%u0644 %u0631%u062D%u0645%u06C1 %u0627%u0644%u0644%u06C1 (%u0627%u0644%u0645%u062A%u0648%u0641%u06CC : %u0661%u0664%u0662%u06BE) %u062C%u0648 %u0645%u062F%u0627%u0626%u0646 %u0634%u06C1%u0631 %u06A9%u06D2 %u0642%u0627%u0636%u06CC %u0628%u06BE%u06CC %u0631%u06C1%u06D2 %u06C1%u06CC%u06BA %u0648%u06C1 %u0641%u0631%u0645%u0627%u062A%u06D2 %u06C1%u06CC%u06BA :

 %u0623%u062A%u064A%u062A %u0628%u0650%u0631%u064E%u062C%u064F%u0644 %u0642%u062F %u0633%u0628%u0651 %u0639%u064F%u062B%u0652%u0645%u064E%u0627%u0646 %u0641%u0636%u0631%u0628%u062A%u0647 %u0639%u0634%u0631%u064E%u0629 %u0623%u0633%u0648%u0627%u0637 %u0642%u064E%u0627%u0644%u064E %u062B%u0645%u0651%u064E %u0639%u064E%u0627%u062F %u0644%u0645%u0627 %u0636%u064E%u0631%u0628%u062A%u0647 %u0641%u0636%u0631%u0628%u062A%u0647 %u0639%u0634%u0631%u064E%u0629 %u0623%u064F%u062E%u0652%u0631%u064E%u0649 %u0641%u064E%u0644%u0645 %u064A%u0632%u0644 %u064A%u0633%u0628%u0647 %u062D%u064E%u062A%u0651%u064E%u0649 %u0636%u064E%u0631%u0628%u062A%u0647 %u0633%u0628%u0639%u064A%u0646 %u0633%u064E%u0648%u0652%u0637%u064B%u0627.

"%u0645%u06CC%u0631%u06D2 %u067E%u0627%u0633 %u0627%u06CC%u06A9 %u0634%u062E%u0635 %u0644%u0627%u06CC%u0627 %u06AF%u06CC%u0627 %u062C%u0633 %u0646%u06D2 %u0633%u06CC%u062F%u0646%u0627 %u0639%u062B%u0645%u0627%u0646 %u0631%u0636%u06CC %u0627%u0644%u0644%u06C1 %u0639%u0646%u06C1 %u06A9%u0648 %u06AF%u0627%u0644%u06CC %u062F%u06CC %u062A%u06BE%u06CC%u060C %u0645%u06CC%u06BA %u0646%u06D2 %u0627%u0633%u06D2 %u062F%u0633 %u06A9%u0648%u0691%u06D2 %u0644%u06AF%u0627%u0626%u06D2%u060C %u0627%u0633 %u0646%u06D2 %u062F%u0648%u0628%u0627%u0631%u06C1 %u06AF%u0627%u0644%u06CC %u062F%u06CC %u0645%u06CC%u06BA %u0646%u06D2 %u062F%u0633 %u06A9%u0648%u0691%u06D2 %u0645%u0632%u06CC%u062F %u0644%u06AF%u0627%u0626%u06D2%u060C %u067E%u06BE%u0631 %u0648%u06C1 %u062F%u0648%u0628%u0627%u0631%u06C1 %u0627%u06CC%u0633%u0627 %u06A9%u0631%u062A%u0627 %u0631%u06C1%u0627 %u062D%u062A%u06CC %u06A9%u06C1 %u0645%u06CC%u06BA %u0646%u06D2 %u0627%u0633%u06D2 %u0633%u062A%u0631 %u06A9%u0648%u0691%u06D2 %u0645%u0627%u0631%u06D2."

%uD83D%uDCDA(%u0627%u0644%u0639%u0644%u0644 %u0648 %u0645%u0639%u0631%u0641%u0629 %u0627%u0644%u0631%u062C%u0627%u0644 %u0644%u0623%u062D%u0645%u062F : %u0664%u0662%u0668/%u0661 %u062D : %u0669%u0664%u0668 %u0648%u0633%u0646%u062F%u06C1 %u0635%u062D%u064A%u062D)


Asim Al Ahwal (r.a) (died 142) he was also qadhi(judge) in madian says :
A person was brought to me , he  had abused usman(r.a) ,i had him flogged ten times .
He again abused and i had him flogged again ten times he continued in his abuse and i continued having him flogged untill he had been flogged 70 times.

(Al illal wal marifah lol Ahmed vol1 page 428 report number 948)
« Last Edit: September 06, 2020, 04:31:01 PM by TAHIR »

TAHIR

Re: Ardor of salaf against blashphamours of sahaba.
« Reply #2 on: September 06, 2020, 08:50:29 PM »
2. Ibrahim ibn maysarah , says :
Never did i see umar ibn Abdul Azeez (r.a) flog a person , except in an instance where he flogged a person who had coursed muawiyah (r.a)

Sharah Aetiqad Ahl- sunnah, Alqaiee
Report no 2385 ,chain is hassan.

3. Abul Fatooh izz-ud-deen ibn abi Talib (died 653, he was from the progeny of Hassan ibn Ali (r.a)) had a rafidhi named An- Najeeb-yahaya- ibn Ahmed-al hilli ibn al awd who abused sahaba, taken around the city of Allepo on the back of a donkey.
(Tarikhul islam  by dhahbi)
Vol-14 ,page 749
4.
Abdullah-ibn-hassan-ibn-hassan-ibn Ali (r.a)
Once said to a rafdhi
" By Allah killing you will be a means of proximity with Allah"
(Tarikh-ibn maeen , riwayat ad dawri
Vol 3 page 248 report no 1162.

TAHIR

Re: Ardor of salaf against blashphamours of sahaba.
« Reply #3 on: September 13, 2020, 11:07:41 AM »
Quote
5. سیدنا حسن رضی اللہ عنہ کے پوتے سیدنا ابراہیم بن الحسن بن الحسن بن علی بن ابی طالب رحمہم اللہ جمیعا فرماتے ہیں :

دخل علي المغيرة بن سعيد وأنا شاب، وكنت وأنا شاب، أشبه برسول الله صلى الله عليه وسلم , فذكر من قرابتي وشبهي وأمله في , قال: ثم ذكر أبا بكر وعمر , فلعنهما وبرئ منهما , قال: قلت: يا عدو الله , أعندي؟ قال: فخنقته خنقا , قال: فقلت له: أرأيت قولك للمغيرة , فخنقته خنقا , أخنقته بالكلام أم بغيره , قال: بل خنقته حتى أدلع لسانه.
 
"میرے ایامِ شباب میں میرے پاس مغیرہ بن سعید آیا، میں چونکہ جوانی میں شکل و صورت میں رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم سے بہت مشابہت رکھتا تھا، تو اس نے میری رسول اللہ صلی اللہ علیہ و سلم سے رشتہ داری، آپ سے مشابہت اور میرے متعلق اپنی خواہشات کا اظہار کیا، پھر اس نے سیدنا ابو بکر و عمر رضی اللہ عنہما کا تذکرہ کیا تو ان پر لعنت کی اور اعلان براءت کیا، میں نے کہا : اے اللہ کے دشمن! میرے سامنے تو ایسا کرتا ہے!؟؟؟ فرماتے ہیں : میں نے بڑی مضبوطی سے اس کا گلہ دبا دیا . (راوی کہتے ہیں) میں نے پوچھا : گلہ دبانے کا مطلب کہ آپ نے اسے باتوں سے چپ کرا دیا؟؟؟ فرمایا : نہیں بلکہ میں نے اس کا گلہ اتنی مضبوطی سے دبایا کہ اس کی زبان باہر نکل آئی تھی."

📚(كتاب الضعفاء للعقیلی : ١٧٩/٤ وسندہ صحیح ، ميزان الاعتدال للذهبي. و نسبه البعض الي الحسن بن الحسن بن علي رحمه الله انظر تاريخ الإسلام و سير أعلام النبلاء للذهبي)

یاد رہے کہ یہ وہی مغیرہ بن سعید جو نہایت برے عقائد و نظریات کا مالک تھا، حافظ ذہبی رحمہ اللہ اس کا نام ذکر کرنے کے بعد فرماتے ہیں : لعنہ اللہ. (تاریخ الإسلام للذهبي : ٣١٧/٣)
Ibrahim (r.a) the grand son of hassan (r.a) , reports :
While i was in my youth mughira came to me ,in youth i was much in resemblance with prophet (s.a.w) so mughira began talking about my resemblance with prophet (s.a.w) , my relationship with prophet and mughiras good wishes about me, then he made a mention of Abu Bakr (r.a) and Umar (r.a) and he began cursing them and expressed disaccosocation with them.upon this i called him out , " o enemy of Allah" and strangled him strongly.(the narrator says , i asked) ,did you strangle him with speech ( does it mean strangling in a metaphorical sense ).To which he replied, no i strangled him enough that his tongue came out of his mouth.(means i strangled him physically and strongly ,not metaphorically) .
Refrence :
Al duafa lil uqayli ,vol 4 ,page 179  with an authentic chain , also in mizan al itidaal, and some attribute this to Hassan bin Hassan bin Ali see siyar and tarekh ul islam  of dhahbi
The mughaira mentioned in the report is mughira ibn saeed ,he upheld many heretical beliefs and hafidh dhahbi after mentioning him says ,
لعنہ اللہ
May curse of Allah sbe upon him .



TAHIR

Re: Ardor of salaf against blashphamours of sahaba.
« Reply #4 on: September 13, 2020, 04:24:38 PM »
Quote
امام ابن عدی رحمہ اللہ فرماتے ہیں :
المغيرة بْن سَعِيد هذا لم يكن بالكوفة ألعن منه.
"اس مغیرہ بن سعید سے بڑا لعنتی پورے کوفے میں نہیں تھا."
(الكامل في ضعفاء الرجال : ٧٣/٨)

حافظ ابن حزم رحمہ اللہ نے بھی اس کے متعلق کہا :
"لَعنه الله. "
(الفصل فی الملل والأهواء و النحل : ١٤١/٤)

امام اعمش رحمہ اللہ بیان فرماتے ہیں قُلْتُ لِلْمُغِيرَةِ بْنِ سَعِيدٍ: أَتُحْيِي الْمَوْتَى؟ قَالَ: لَا. فَقُلْتُ: فَعَلِيٌّ؟ قَالَ: وَالَّذِي أَحْلِفُ بِهِ لَوْ شَاءَ أَحْيَى عَادًا وَثَمُودًا وَقُرُونًا بَيْنَ ذلك كثيرا.

"میں نے مغیرہ بن سعید سے پوچھا : کیا تو مردے زندہ کر سکتا ہے، بولا : نہیں. میں نے کہا : سیدنا علی رضی اللہ عنہ کر سکتے ہیں!؟؟؟ کہنے لگا : اللہ کی قسم! اگر وہ چاہیں تو قوم عاد و ثمود اور ان کے مابین ہلاک ہونے والی ساری بستیاں زندہ کر دیں."
Curse of Allah be upon him.

(Al fasl fil milal, wal ahwaawun nihal vol 4 p 141)
Imam Aamsh (r.a) narrates
" I asked mughira ,do you resurrect the dead ? He replied in negative .i asked does Ali resurrect? He replied by Allah if he wills ,he can resurrect all those were destroyed from the people of Aad and samud ,and all those destroyed between the two habitations.
(Al ma'rifah ,wal tarikh by fasawi , vol 3 page 50 , chain is authentic)



« Last Edit: September 13, 2020, 04:33:18 PM by TAHIR »

 

Related Topics

  Subject / Started by Replies Last post
5 Replies
1459 Views
Last post June 17, 2015, 11:37:35 PM
by lotfilms
7 Replies
4135 Views
Last post August 17, 2015, 01:20:54 PM
by Al Dukhan
3 Replies
1407 Views
Last post June 14, 2015, 11:44:24 PM
by Farid
6 Replies
1173 Views
Last post October 02, 2015, 08:48:30 AM
by Optimus Prime